Pakistan News

کراچی میں زندگی ’معمول‘ پر آگئی، 8 افراد ہلاک

کراچی: پاکستان کے اہم ترین کاروباری مرکز کراچی میں زندگی ’معمول‘ پر آگئی ہے اور آج شہر میں ٹارگٹ کلنگ کے واقعات میں اب تک 8افراد کو موت کے گھاٹ اتار دیا گیا ہے۔

مرنے والوں میں رینجرز کے دو مغوی اہلکار اور بلوچستان سے لاپتا 2 افراد بھی شامل ہیں۔

آزاد برطانوی نیوز ویب سائٹ دی نیوز ٹرائب کے نمائندے کے مطابق اہدافی قتل کا تازہ واقعہ ملیر کے علاقے کھوکھراپار میں پیش آیا ہے جہاں ’نامعلوم افراد‘ نے فائرنگ کرکے محمد علی عرف پپو نامی نوجوان کو ہلاک کردیا۔

ادھر شہر کے مغربی علاقے اورنگی ٹاون خیر آباد سے 2افراد کی تشدد زدہ لاشیں برآمد ہوئیں۔

پولیس کے مطابق مقتولین کا تعلق بلوچستان کے علاقے پنجگور سے ہے اور وہ لاپتا افراد کی فہرست میں شامل تھے، لاشوں کی شناخت بابو افتخار اور مقبول کے ناموں سے کی گئی۔

علاوہ ازیں بلدیہ ٹاؤن میں اے ایس آئی محرم چانڈیو کو فائرنگ کرکے قتل کردیا گیا، بلدیہ ٹاون کے علاقے میں ہی نامعلوم افراد نے بس پر فائرنگ کردی جس کے نتیجے میں جاوید نامی شخص ہلاک ہوگیا۔

ادھر شہر کے جنوب مغربی علاقے پاک کالونی میوہ شاہ قبرستان سے رینجرز کے دو اہلکاروں کی لاشیں ملیں جن کی شناخت حوالدار اعجاز اور منیر بلوچ کے نام سے ہوئی، مقتولین کو دو روز قبل اغوا کیا گیا تھا۔

پاک کالونی کے علاقے پرانا گولیمار سے ہی ایک شخص کی لاش برآمد ہوئی ہے۔

ایم کیو ایم کی جانب سے ہڑتال کی کال واپس لیے جانے کے بعد شہر میں پیٹرول پمیس بھی کھول دیے گئے ہیں اور ٹرانسپورٹ بھی سڑکوں پر رواں دواں ہے۔

اسکول سمیت مختلف تعلیمی ادارے کُھل گئے ہیں۔

Most Popular

To Top